the etemaad urdu daily news
آیت شریف حدیث شریف وقت نماز

ای پیپر

To Advertise Here
Please Contact
editor@etemaaddaily.com

اوپینین پول

کیا ریاست تلنگانہ میں کورونا وائرس کے معاملات کو محدود کرنے کے لئے ایک بار پھر لاک ڈاؤن نافذ کرنے کی ضرورت ہے؟

ہاں
نہیں
کہہ نہیں سکتے
نئی دہلی، 18 فروری (یو این آئی,عابد انور) قومی شہریت (ترمیمی)قانون، این آر سی اور این پی آر کے خلاف شاہین باغ میں خاتون مظاہرین نے سڑک بند ہونے پر واویلا مچانے والوں سے کہا کہ، حکومت، عدلیہ اور کچھ خاص طبقوں کو سڑک بند ہونے کی بہت فکر ہے لیکن ان خواتین کی فکر نہیں ہے جو زائد از دو ماہ سے شاہین باغ سمیت ملک بھر میں سڑکوں پر ہے۔
شاہین باغ خاتون مظاہرین نے کہا ایک سڑک بند ہونے کی وجہ سے آسمان سر پر اٹھالیا گیا ہے جب کہ دہلی میں روزانہ کئی سڑکیں کسی نہ کسی وجہ سے بند ہوتی ہیں اور لوگوں کے کئی گھنٹے برباد ہوتے ہیں لیکن اس پر کوئی بات نہیں کی جاتی۔ شاہین باغ روڈ کے سلسلے میں نہ صرف پورے شاہین باغ کو نشانہ بنایا جارہا ہے بلکہ اسے بدنام کرنے کے لئے طرح طرح کے ہتھکنڈے اپنائے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اس کے لئے اگر کوئی ذمہ دار ہے تو اور حکومت اور انتظامیہ ہے کیوں کہ اب تک اس نے ہماری بات نہیں سنی ہے۔
مظاہرین میں شامل ریتو کوشک نے حکومت کی بے حسی پر افسوس کا اظہا ر کرتے ہوئے کہاکہ کوئی بھی حکومت عوام کے لئے ہوتی ہے، اسے عوام کی تکلیف، دکھ، درد اور پریشانیوں کو دو رکرنا چاہئے لیکن یہ حکومت ضد پر اڑی ہوئی ہے اور حکومت نے ہمیں کیڑے مکوڑے سمجھ لیا ہے اس لئے ہمارے دکھ درد کا اسے احساس نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ عوام نے حکومت بنائی ہے نہ کہ حکومت نے عوام کو بنایا ہے۔ انہوں نے کہاکہ احتجاج کا اختیار ہمیں آئین نے دیا ہے نہ کہ حکومت نے، اور جس آئین نے حکومت کو اختیار دیا ہے وہی آئین ہمیں احتجاج کرنے کا بھی حق دیا ہے اور حکومت کو ہماری بات سننی ہی پڑے گی۔
انہوں نے کہاکہ قانون عوام کے لئے ہوتا ہے نہ کہ عوام قانون کے لئے۔ اسی لئے حکومت کو کوئی ایسا قانون نہیں بنانا چاہئے جس سے عوام کو کوئی تکلیف پہنچے۔ وزیر اعظم مسٹر مودی کے بنارس والے بیان پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے محترمہ کوشک نے کہاکہ وہ اگر اس کالا قانون کو واپس نہیں لیں گے تو ہم بھی اپنا دھرنا جاری رکھیں گے اور پورے ملک کی خواتین کو جمع کریں گے۔انہوں نے کہاکہ اس قانون کے خلاف اس وقت پورا ملک شاہین باغ بن چکا ہے اور اگر حکومت نے اسے واپس نہیں لیا تو اس میں بہت شدت آئے گی۔
مظاہرین میں شامل انیتا باگ، روربی، شاہین اقراء اور رضیہ سلطان نے اسی طرح کے جذبات کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ مجھے امید ہے کہ عدالت ہمارے ساتھ انصاف کرے گی اور اس قانون کو رد کردے گی۔ انہوں نے کہاکہ اگر عوام کو عدالت سے انصاف نہیں ملے گا تو پھر عوام عدالت کیوں جائیں گے۔
مہاراشٹر کے ناگپور سے آنے والے شیخ تحسین، روزینہ پروین، شیخ یوسف اور حنیف پٹیل نے بتایا کہ وہ چھٹی لیکر شاہین باغ خاتون مظاہرین کی حمایت کرنے آئے ہیں۔ اس وقت تک دھرنا میں شریک رہیں گے جب تک حکومت اسے واپس نہیں لے لیتی۔ انہوں نے کہاکہ شاہین باغ کی طرح پورے مہاراشٹر میں سی اے اے کے خلاف مرد و خواتین کا احتجاج جاری ہے اور ناگپور میں چھ جگہ مظاہرے ہورہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ناگپور میں پیلی ندی، کیکا، باباصاحب امبیڈکر چو ک وغیرہ میں مظاہرے ہورہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ یہ ہمارے آئین کے خلاف ہے اس لئے ہم اس کی حمایت کررہے ہیں۔

اس پوسٹ کے لئے کوئی تبصرہ نہیں ہے.
تبصرہ کیجئے
نام:
ای میل:
تبصرہ:
بتایا گیا کوڈ داخل کرے:


Can't read the image? click here to refresh
http://st-josephs.in/
https://www.darussalambank.com

موسم کا حال

حیدرآباد

etemaad rishtey - a muslim matrimony
© 2020 Etemaad Urdu Daily, All Rights Reserved.