the etemaad urdu daily news
آیت شریف حدیث شریف وقت نماز

ای پیپر

To Advertise Here
Please Contact
editor@etemaaddaily.com

اوپینین پول

ہندوستان نے کورونا وائرس کی روک تھام پر تسلی بخش کام کیا ہے۔ آپ کیا سوچتے ہیں؟

ہاں
نہیں
کہہ نہیں سکتے
سری نگر، 10 اگست (یو این آئی) وسطی کشمیر کے قصبہ بڈگام میں اتوار کو مشتبہ جنگجوئوں کے حملے میں زخمی ہونے والا بی جے پی کارکن پیر کی علی الصبح سری نگر کے شری مہاراجہ ہری سنگھ ہسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ بیٹھا۔
سرکاری ذرائع نے بتایا کہ 38 سالہ بی جے پی کارکن عبدالحمید نجار ولد جمال نجار ساکنہ موہن پورہ پیر کی علی الصبح قریب پانچ بجے چل بسا۔
انہوں نے کہا: 'عبدالحمید نجار کو پیٹ اور ٹانگ میں گولی لگی تھی۔ آپریشن کے بعد وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ بیٹھے'۔
ذرائع نے بتایا کہ عبدالحمید نے محض چھ ماہ قبل بی جے پی میں شمولیت اختیار کی تھی اور انہیں پارٹی کے او بی سی مورچا کا ضلعی صدر بنایا گیا تھا۔
پولیس ذرائع نے بتایا کہ عبدالحمید نجار اتوار کی صبح معمول کی طرح مارننگ واک پر نکلے تھے۔ تاہم جب وہ ریلوے سٹیشن کے نزدیک چہل قدمی اور جسمانی ورزش میں مصروف تھے تو اس دوران وہاں جنگجو نمودار ہوئے جنہوں نے مذکورہ بی جے پی کارکن پر گولیاں چلائیں۔
انہوں نے مزید کہا کہ اگرچہ حملے کے فوراً بعد سکیورٹی فورسز نے جائے واردات پر پہنچ کر علاقے کو محاصرے میں لیکر تلاشی آپریشن شروع کیا تھا تاہم حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوچکے تھے۔
بی جے پی کارکن پر حملے کے بعد بڈگام میں مبینہ طور پر اس جماعت سے وابستہ پانچ کارکنوں نے علیحدگی اختیار کی ہے۔ ان پانچ کارکنوں نے سوشل میڈیا کا استعمال کرتے ہوئے بی جے پی سے الگ ہونے کا اعلان کیا ہے۔
قابل ذکر ہے کہ وادی میں مشتبہ جنگجوئوں نے بی جے پی کارکنوں کو نشانہ بنانا شروع کردیا ہے جس کے پیش نظر جہاں اب تک کم از کم پندرہ کارکنوں نے پارٹی سے لاتعلقی کا اظہار کیا ہے وہیں درجنوں کارکن محفوظ مقامات پر منتقل کئے جا چکے ہیں۔
چھ اگست کو مشتبہ جنگجوئوں نے ضلع کولگام کے ویسو قاضی گنڈ میں بی جے پی سرپنچ سجاد احمد کھانڈے پر اپنے گھر کے نزدیک گولیاں چلائیں جس کے نتیجے میں ان کی موت واقع ہوئی۔
قبل ازیں مشتبہ جنگجوئوں نے 4 اگست کی شام دیر گئے اکھرن قاضی گنڈ میں بی جے پی پنچ عارف احمد پر گولیاں چلائیں جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوئے اور فی الوقت ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔
اس سے قبل جنگجوئوں نے 8 جولائی کو قصبہ بانڈی پورہ میں بی جے پی کے ضلع صدر شیخ وسیم باری، ان کے والد بشیر احمد اور بھائی عمر بشیر پر گولیاں برسائی تھیں جس کے نتیجے میں ان تینوں کی موت واقع ہوئی تھی۔
وادی میں مختلف سیاسی جماعتوں کے لیڈران اور کارکنوں کی شکایت ہے کہ انہیں سیکورٹی فراہم نہیں کی جارہی ہے۔ بعض کی یہ بھی شکایت ہے کہ ان کے ساتھ سیکورٹی اہلکار مامور تھے لیکن پی ڈی پی – بی جے پی اتحاد ختم ہونے کے بعد ان سے یہ سیکورٹی واپس لی گئی۔
بی جے پی جموں و کشمیر کے جنرل سیکرٹری (آرگنائزیشنز) اشوک کول نے بتایا کہ انہوں نے اپنے رہنماؤں اور کارکنوں کی سکیورٹی اور محفوظ جگہوں پر رہائشی سہولیات کی فراہمی کا معاملہ پارٹی کے قومی صدر جگت پرکاش نڈا کے سامنے اٹھایا ہے۔
جموں و کشمیر میں بی جے پی کے صدر رویندر رینہ کا کہنا ہے کہ ہماری سیکورٹی فورسز جس طرح سے عسکریت پسندوں کا صفایا کر رہی ہیں، اس کی وجہ سے یہ بوکھلاہٹ کا شکار ہیں اور نتیجتاً وہ بی جے پی کارکنوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔
یو این آئی ظ ح بٹ

اس پوسٹ کے لئے کوئی تبصرہ نہیں ہے.
تبصرہ کیجئے
نام:
ای میل:
تبصرہ:
بتایا گیا کوڈ داخل کرے:


Can't read the image? click here to refresh
خصوصی میں زیادہ دیکھے گئے
http://st-josephs.in/
https://www.darussalambank.com

موسم کا حال

حیدرآباد

etemaad rishtey - a muslim matrimony
© 2020 Etemaad Urdu Daily, All Rights Reserved.